قوم تیار ہوجائے یا تو ملک بچے گا یا کرپٹ افراد، عمران خان


Faizul Hassan Posted on August 20, 2018

اسلام آباد: وزیرِاعظم عمران خان کا قوم سے اپنے پہلے خطاب میں کہنا تھا کہ پاکستان کو اس وقت بے شمار چینلجز کا سامنا ہے لیکن قوم کو گھبرانے کی ضرورت نہیں، میں ان سے نکلنے کا حل بتاؤں گا۔

وزیراعظم کے 524 ملازم ہیں، وزیراعظم کی 80 گاڑیاں جس میں 33 بلٹ پروف ہیں، ہیلی کاپٹر اور جہاز ہیں، گورنر ہاؤسز اور وزیر اعلیٰ ہاؤسز ہیں جہاں پر کروڑوں روپے خرچ ہوتے ہیں، ایک طرف قوم مقروض ہیں اور دوسری طرف صاحب اقتدار ایسے رہتے ہیں جیسے گوروں کے دور میں تھے، پچھلے وزیراعظم نے 65 کروڑ روپیہ دوروں پر خرچ کیا، اسپیکر قومی اسمبلی نے 8 کروڑ روپیہ دوروں پر خرچ کیا قوم کو پتا چلنا چاہیے کہ ان کا پیسہ کہاں جارہا ہے۔

عمران خان نے کہا ہے کہ وہ وزیراعظم کے ذاتی استعمال کے لیے دستیاب 80 گاڑیوں میں سے صرف دو اپنے استعمال میں رکھیں گے، باقی تمام گاڑیاں نیلام کردی جائیں گی اور ان سے ہونے والی آمدنی قومی خزانے میں شامل کی جائے گی۔

عمران خان نے کہا کہ وہ اپنے گھر میں رہنا چاہتے تھے لیکن صرف سیکیورٹی کے باعث اپنے گھر میں نہیں رہ رہے۔

پاکستان کے عدالتی نظام پر بات کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ چیف جسٹس صاحب سے درخواست ہے کہ کئی بیواؤں کی زمینوں پر قبضے ہیں جن کے سالوں سے فیصلے نہیں ہوئے، چیف آف جسٹس پاکستان سب سے پہلے بیواؤں کوانصاف دلوائیں۔ انہوں نے کہا کہ عدل کا نظام ٹھیک کرنے کے لیے چیف جسٹس سے ملاقات کروں گا۔